غزلیات

(1)

ژے چھیکھ قٲیم میۍ ڈۆل کھور
اوہ ژیۍ زیونتھ اوہ میۍ ہور

ہاوس کانچھاں چٲنی شوب
پانس تامتھ چھُے اتہِ اور

دل نِتھ وُنہِ سُے بمہ ژکنیار
بییہِ کتھ پیٹھ چھُے پیومت ٹور

امہِ کتھہِ کٔرنم وٲنجہِ گدۍ
کیا سہ نظرے دزِ ہے تور

کُس تاں ارماں ہیتھ آیوس
کتھہِ کتھہِ منز ووتُس کتہِ کور

ساسن دادین تن دِتھ دراس
اکۍ عشقن کۆرنس کمزور

وُچھ کتھ وقتس باگنۍ آے
دارین ٹھۆر دروازن تور

بتھہِ پتہ بتھہِ پننُے اوحال
ٲنس کتھ چھُم روزُن لور

عمرن ہندۍ رشتے پییہِ وسۍ
یمۍ وقتن کرۍ کم کم دور

غم گیہ ژٔرۍ دل گۆو تنگ
بییہِ پێن لرِ ہرراونۍ پور

بییہِ پێن پوشہ لنجن دِنۍ ڈکھ
واون ہیتۍ تھیکہ ناونۍ زور

اتھۍ پیٹھ چھا سمسارس بوش
راتک ہۆپ دۆپ صبحک شور

ازۍ کین ہنگامن تُل دس
پگہس پیٹھ کر پگہے غور

ادہ چھی جگرس داغے داغ
نتہ کمۍ ازتاں ییتہِ سندور

کامل وۅنۍ گۆو لسنُے جان
لۅتہِ کھۅتہ لۆت گۆو رُت ننہ وور

(لوہ تہ پروہ 1965)

 

(2)

پۆت دگرے دل ساوُن چھُے سا
یوٗت سُلی از راوُن چھُے سا

شہہ روکتھ کوہ نم چھیکھ ژاپاں
ون سا کینہہ فرماوُن چھُے سا

آبس منز چھہِ نہ تارکھ گنزراں
پان پنن للناوُن چھُے سا

سرۍ یس آنگن ہاوُن راوی
بام پنن نتۍ راوُن چھُے سا

تاپہ ٹیۆکا پیۆو شنہ پھیکہِ شہلیۍ
میۍ سیتین انزراوُن چھُے سا

ژیہ تہِ وق گویا شکھ وُزنٲوتھ
وۅلہ سا دل پرکھاوُن چھُے سا

بی گویا گٹہِ منز بر دوجن
بی اۆند پۆک وُزناوُن چھُے سا

کانہہ نبہ دۆند کانہہ بُنیلا ٲخر
سمسارے مشراوُن چھُے سا

اکھ عالم ہووُتھ کیا ہووُتھ
بییہِ کانہہ عالم ہاوُن چھُے سا

کامل چانۍ طرح کٔھتۍ عرشس
غزلک فن وُپھناوُن چھُے سا

(لوہ تہ پروہ 1965)

 


(3)

بہار پۆک نہ اگر چانہِ ترایہِ گرایہِ میہ کیا
گلالہ داغ جگر ہیتھ چھہ جایہ جایہ میہ کیا

بہ چھُس نہ پننہِ خیالک تہِ دس نگر از تاں
قلم یہ میون تے پۆک چانہِ رایہ رایہ میہ کیا

قدم قدم چھہ میہ وٲراگہ منزلس کُن گژھاں
اگر میہ سیتۍ ژہ آسکھ تہِ ژھایہ ژھایہ میہ کیا

بیہ ریہہ الٲوۍ میہ پننی دماغ دہۍ کۆرمت
وۅتھاں چھہِ مشکہ لۅمبکھ کٲنسہِ مینکایہ میہ کیا

گیُندا کریوم تہ کیاہ تاں گیویوم گنگرارے
سٔمتھ وژھایہ اگر عرشہ اپسرایہ میہ کیا

میہ آفتاب تہِ کٔہیا چھہِ اردلس پکۍ متۍ
کٔرن اگر چھُہ کراں خندہ سایہ سایہ میہ کیا

میہ ژج نہ زانہہ کنن پننے دلچ یہ دبرارے
صدا اگر دِواں لوٗسکھ ژہ شایہ شایہ میہ کیا

میہ ؤتھۍ نہ پننہِ خمارے زنہے تہِ ٹارۍ پننۍ
وُٹھن پھۆلی تہِ زں کوسم ژیہ میانہِ رایہ میہ کیا

حرام چھکھ اگر ہے قبرِ میانہِ پیوٗر تھون
میہ سیتۍ گیہ تہِ زن یم میانۍ شعر ضایع میہ کیا

(بییہ سے پان 1967)


(4)

کانہہ نبی کانہہ تہِ رسول آو نہ یتھ شہرس منز
زایہِ رخ بیز خدا زاو نہ یتھ شہرس منز

ییلۍ و تیلۍ روزہ وۅپر ژھایہِ دِلس رایہِ گنداں
نظرِ زانہہ پان پنُن آو نہ یتھ شہرس منز

وہۍ یہ سرسٲوۍ فضا کوچہ انێر جایہ گنێر
یُس اکھا ژاو سُہ نۆن دراو نہ یتھ شہرس منز

یُس وسُے فتوہ بدس خاک بسر چاک جگر
کۅس کمس باگہِ چھیہ اندیاو نہ یتھ شہرس منز

آبہ دریاو چێنس قطرہ نہ راکھسۍ راجس
لاشہ امبار کھێنس کاو نہ یتھ شہرس منز

کانہہ تہِ سنگلابہ ہوس آو نہ بامل ہے ہے
ژتھرہ گگرایہ وَہکۍ واو نہ یتھ شہرس منز

ہے لتی یُتھنہ دلس لولہ مژھیُل شوق گنی
یم وُشنۍ کاڈ تہ پٲراو نہ یتھ شہرس منز

کٲنسہِ پھٹروو نہ کانہہ سحرہ نہ کانہہ شر دۆبروو
کانہہ کلیم اللہ میہ رۆس ژاو نہ یتھ شہرس منز

(پدس پۆد ژھاے 1972)


(5)

چھُہ میونے دل تہ میونے سینہ بابا
دپاں سورُے ژیہ چھُے ٲینہ بابا

کمو سموات کۆر کھنڈس تہ زہرس
یمو کۆر ٲسۍ تم کمہِ دینہ بابا

چھُہ پراواں موت کمہِ قونونہ انساں
چھُہ روزاں زندہ کمہِ ٲینہ بابا

کھساں کوہ تٍرہ ہارنہِ تاپہ رٍ رٍ
پھٹاں کوہ گمہ چھہِ ماگنہِ شینہ بابا

یمن ییٖژن کتابن کیا چھُہ لیکھتھ
چھہِ کاغذ کیمۍ تہِ آمتۍ نینہ بابا

بروسس پیٹھ چھہِ اسۍ سٲری کراں ٹنز
خلاہس منز چھہِ اسۍ بسکینہ بابا

کراں کِتھہ کنۍ چھہِ وارین منز دیون بند
گژھاں کِتھہ کنۍ پری تٲبینہ بابا

یہ مۆت شاعر، یہ تۆت انساں، یہ کامل
کھۅتیو رۆستے سۆتھُر گنجینہ بابا

(یم میانۍ سخن 2011)

 

(6)

ڈھیر چھی سخنن گمتۍ، نیر تہ بیہہ آبس منز
معنہِ حرفن چھُہ ہُناں تیزاں چھیہ تیہہ آبس منز

وارہ وُچھ سینس اندر دل تہ بزُن تیۅنگلن پیٹھ
وارہ وُچھ جگرس اندر خون تہ چیہہ آبس منز

سیکہِ صحراوس دِواں آسہِ پگاہ تاپھ کشیر
کا￿لۍ یٖراں آسہِ لدّاخ تہ لیہہ آبس منز

خوفہ ہۆت پونۍ بٹھس آسہِ بیبِس تل تل اژاں
ہییہِ جلدیو زَنم یاں، وۅتھہِ ریہہ آبس منز

منز دُپہرس چھیہ پھٹاں سِریس تہِ وسواسۍ رُمن
پاسِ ٲخر چھیہ ہیواں زوٗنہِ تہِ ریہہ آبس منز

لوٗکھ گاہے چھہِ دِواں وۅلسنہ یِتھ گامن ژٕکھ
لوکھ مِلواں چھہِ گہے شوقن تہِ ویہہ آبس منز

رٲومژ گاو کہن ژھاراں چھیہ، کانژھا ونۍ توس
پانژھ پھٹۍ خۅشکس اندر، لمکاں چھہِ شیہہ آبس منز

غزلہ بنجارۍ یہ کامل چھُہ دواں نارہ طرح
بختہ شہجارۍ لُکن پیمژ چھیہ نیہہ آبس منز

(یم میانۍ سخن 2011)


 

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s